عراق :احتجاجی ریلیاں، نئی حکومت میں شامل نہیں ہونگے ،مقتدی

دنیا
12
0
sample-ad

بغداد (اے پی پی)فورسز کے ہاتھوں ہلاک ہونیوالے مظاہرین کی یاد میں تقریب کا انعقاد، تحقیقات کا مطالبہعراق میں گزشتہ روز بھی احتجاجی ریلیاں نکالی گئیں جبکہ عراق کے سرکردہ مذہبی رہنما واسکالر اور الصدری تحریک کے سربراہ مقتدی الصدر نے کہا ہے کہ ان کی جماعت نئی حکومت کا حصہ نہیں بنے گی۔ گزشتہ روز عراق کے شہروں بغداد، بصرہ اور موصل میں احتجاجی ریلیاں نکالی گئیں اور مظاہروں کے دوران حکومتی فورسز کے ہاتھوں مرنے والے افراد کی یاد میں تقریبات منعقد کی گئیں ۔ مظاہرین نے عراقی حکومت کے خلاف شدید نعرے بازی کی اور حکومت سے مستعفی ہونے اور مظاہرین کی ہلاکتوں کی شفاف تحقیقات کا مطالبہ کیا ۔ ادھر مقتدیٰ الصدر کی طرف سے نئی حکومت میں عدم شمولیت سے متعلق یہ بیان ایسے وقت سامنے آیا ہے جب ملک گیر احتجاج کے بعد وزیراعظم عادل عبدالمہدی نے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے، الصدری تحریک کی پارلیمنٹ میں 54 نشستیں ہیں۔انسانی حقوق کی تنظیموں کے مطابق حالیہ ہفتوں کے دوران عراق میں پرتشدد احتجاجی مظاہروں کے دوران سیکیورٹی فورسز کے ساتھ تصادم میں کم سے کم 400 افراد ہلاک اور ہزاروں زخمی ہوچکے ہیں۔ یاد رہے کہ الصدری تحریک نے 2018 کے پارلیمانی انتخابات میں 54 نشستوں پرکامیابی حاصل کی تھی۔

sample-ad

Facebook Comments

POST A COMMENT.