دنیا

دنیا
20
0
sample-ad

ایران سے جنگ عالمی معیشت تباہ کر دے گی:سعودی عرب

ریاض(ایجنسیاں)سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے کہاہے کہ سعودی عرب کی ایران سے جنگ ہو ئی توعالمی معیشت تباہ ہوجائے گی ۔امریکی میڈیاکو انٹرویو دیتے ہوئے شہزادہ محمد بن سلمان نے کہاعلاقائی حریف سے کشیدگی کے خاتمہ کیلئے غیر فوجی حل پہلی ترجیح ہے ۔اگر دنیا نے ایران کو روکنے کیلئے ٹھوس اقدامات نہ کئے تو آنے والے وقت میں ہم مزید کشیدگیاں دیکھیں گے جس سے عالمی مفادات کوشدید نقصان پہنچے گا ۔سعودی ولی عہد نے کہا جنگ سے تیل کی رسد متاثر ہو گی اور تیل کی قیمتیں ناقابل تصور حد تک بڑھ جائیں گی جو کسی نے اپنی زندگی میں پہلے کبھی نہ دیکھی ہوں گی۔شہزادہ محمد نے کہا 14 ستمبر کو سعودی آئل فیلڈ پر حملہ بیوقوفانہ تھا۔اس حملے سے 5فیصد آئل سپلائی متاثر ہوئی جس کے اثرات پوری دنیا میں دیکھے گئے ۔انہوں نے کہا خلیجی ممالک دنیا کو توانائی کی فراہمی کے 30 فیصد حصہ دار ہیں جبکہ خطہ 20 عالمی تجارتی گزرگاہوں اوردنیا کی 4 فیصد مجموعی پیداوار کی نمائندگی کرتا ہے ۔تصور کریں یہ تینوں چیزیں رک جائیں گی تو کیاہوگا۔بات جاری رکھتے ہوئے سعودی ولی عہد نے کہا اس کا مطلب ہے کہ اس جنگ سے ناصرف سعودی عرب یا مشرق وسطٰی کے ممالک متاثر ہونگے بلکہ عالمی معیشت تباہ ہوجائے گی۔انہوں نے ایران کیخلاف فوجی کارروائی کا فوری امکان مسترد کرتے ہوئے کہاکہ سیاسی اور پر امن حل جنگ سے کئی گنا بہتر ہے ۔دریں اثنا سعودی ولی عہد نے کہا کہ انہوں نے صحافی جمال خشوگی کے قتل کے احکامات نہیں دئیے تھے تاہم وہ ملک کے رہنما ہونے کی حیثیت سے اس کی ذمہ داری لیتے ہیں۔ سعودی عرب

اردوان کی مطلق العنانیت کیخلاف دنیا یکساں موقف اپنائے :گولن

واشنگٹن(آئی این پی)ترکی میں کالعدم گولن موومنٹ کے سربراہ فتح اللہ گولن نے زور دیا ہے کہ “اردوان کی مطلق العنانیت” کے حوالے سے ایک یکساں عالمی موقف اپنایا جائے ۔انہوں نے کہا اردوان کسی کی بات پر کان نہیں دھرتے بالخصوص ہماری بات پر ،انہوں نے ہمارے خلاف عدالتی احکامات جاری کر رکھے ہیں ،وہ ہم پر دہشت گردی کا الزام عائد کرتے ہیں۔ گولن کے مطابق جمہوری ، مغربی اور اسلامی ممالک اردوان کے حوالے سے یکساں متحد موقف اختیار کر یں تا کہ دباؤ ڈال کر انہیں استبدادیت سے یوٹرن لینے پر مجبور کیا جا سکے ۔

خشوگی کے قاتل بھاگ رہے ہیں:اردوان

انقرہ:ترک صدر نے کہا اگر 11 ستمبر کے حملے کو شمار نہ کیا جائے تو کہا جا سکتا ہے کہ خشوگی کا قتل 21 ویں صدی کا سب سے بڑا اور سب سے متنازع واقعہ تھا۔

sample-ad

Facebook Comments

POST A COMMENT.