میانوالی

یونین کونسل ڈھیر جدید دور میں بھی گونا گوں مسائل کا شکار

داؤدخیل:داؤدخیل کے نواحی علاقہ ڈھیر امید علی شاہ اور یونین کونسل ڈھیر اس جدید دور میں بھی گونا گوں مسائل کا شکار ہے. سہولیات ناپید ہو چکی ہیں قیام پاکستان سے قبل کا یہ گاؤں جو وزیر اعظم پاکستان کے حلقے میں ہے لیکن کوئی سہولت نہیں نہ ہی ہسپتال ،ہائی سکول ،نہ گرلز ہائی سکول ،جبکہ قیام پاکستان کے بعد بننے والی زراعت ،ڈسپینسری ،یونین کونسل کی بلڈنگ ،ویٹرنری ہسپتال بلڈنگ ،سب کھنڈر بن چکے ہیں ۔سروے میں شہری پھٹ پڑے ،ڈھیر امید علی شاہ شہر نے کاسٹ شدہ ووٹوں کا اسی فیصد پاکستان تحریک انصاف کے امیدواران کو دیا ہے یہ اب سے نہیں 1997 سے ہر الیکشن کے بعد ووٹوں کی تعداد مسلسل بڑھتی رہی پیپلزپارٹی کا گڑھ اب پاکستان تحریک انصاف کا گڑھ بن چکا ہے ڈھیر امید علی شاہ بہت سارے مسائل کا شکار ہے ڈھیر امید علی شاہ کے اہم ترین مسائل میں پانی کا مسئلہ انتہائی گھمبیر نوعیت کا ہے پینے کے پانی میں آرسینک کی مقدار بڑھتی جا رہی ہے ۔ یونین کونسل آفس کی بلڈنگ کئی دہائیوں سے مخدوش حالت میں ہے یوسی آفس ایک دکان میں چل رہا ہے یونین کونسل آفس کو تعمیر کیا جانا چاہیے 1964سے قائم ڈسپنسری انتہائی مخدوش حالت میں ہے اب اس کا نقشہ منظور ہوا ہے امید ہے جلد کام شروع ہو جائے گا محکمہ ء زراعت کا آفس کھنڈر بن چکا ہے اسکی مرمت و عملہ تعینات کرنے کی اشد ضرورت ہے ۔ڈھیر امید علی شاہ کو مین روڈ سے ملانے والا روڈ ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہے کارپٹ روڈ کی اشد ضرورت ہے ڈھیر امید علی شاہ ریلوے سٹیشن پر ٹرینوں کے سٹاپ مقرر کئے جانے چاہئیں مین بنوں روڈ پر واقع ریلوے سٹیشن ماضی میں بہت منافع دے رہا تھا اب اسے بالکل نظرانداز کیا جا رہا ہے ۔

Show More

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
Close
%d bloggers like this: