6

سود سمیت قرضے نہ دینے ہوتے تو مفت حج کراتے، عمران خان

وزیراعظم عمران خان نے پاکستان ریلوے میں کرپشن کے کیسز قومی احتساب بیورو (نیب) کو بھجوانے کی ہدایت کردی۔

وزیراعظم ہاؤس اسلام آباد میں پاکستان ریلوے لائیو ٹریکنگ سسٹم اور تھل ایکسپریس کی افتتاحی تقریب منعقد ہوئی۔ دونوں منصوبوں کا افتتاح وزیراعظم عمران خان نے کیا۔ تقریب میں وزیر ریلوے شیخ رشید احمد سمیت دیگر حکام نے شرکت کی۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے شیخ رشید کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ریلوے میں جو بھی کرپشن ہوئی، اس کی تحقیقات نیب کی سپرد کی جائیں اور ریلوے میں مزید خرچے کم کریں۔

وزیراعظم عمران خان کہا کہ ٹرین کے ذریعے عام آدمی سفر کرتا ہے اور ٹریکنگ سسٹم سے ریلوے مسافروں کیلئے آسانی ہوگی۔

حج پر سبسڈی ختم کرنے کے فیصلے کا دفاع کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ ماضی کی حکومت کے لئے گئے قرضوں کے باعث ہماری حکومت ایک دن کا سود 6 ارب روپے ادا کررہی ہے اور قرضوں کی قسط الگ دے رہیں ہیں۔ اگر سابقہ حکومتیں خزانے میں کچھ چھوڑ کر جاتیں تو حاجیوں کو مفت بھیج دیتے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت میں 6 ماہ ہونے والے ہیں اور نئے پاکستان میں لوگوں کو غربت سے نکالنا چاہتے ہیں۔ پہلے سی پیک ایک سڑک اور چار پاور اسٹیشنوں کا نام تھا لیکن اب چین کے ساتھ متعدد شعبوں میں کام کریں گے۔

گیس کی قیمتوں میں اضافے سے متعلق وزیراعظم نے کہا کہ گیس سیکٹر پر157 ارب روپے کے قرضے ہیں اور 50 ارب روپے کی سالانہ گیس کی چوری ہورہی ہے۔ لہٰذا گیس کی قیمتیں نہ بڑھاتے توگیس کمپنیاں بند ہوجاتیں۔

دوسری جانب سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ٹوئٹ کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ معاشی استحکام کے لیے اٹھائے گئے اقدامات کے باعث جنوری 2018 کے مقابلے میں جنوری 2019 میں پاکستان کے برآمدات بڑھ گئے ہیں اور درآمدات میں کمی دیکھنے کو مل رہی ہے جبکہ تجارتی خسارے میں ایک ارب ڈالرز کی نمایاں کمی آئی ہے۔

وزیراعظم نے سروسز ٹریڈ کا خسارہ بھی 80 کروڑ کم ہوا ہے۔ جولائی 2018 سے جنوری 2019 کے دوران بھجوائی گئیں ترسیلاتِ زر میں گزشتہ برس کے اسی دورانیے کے مقابلے میں 12.2 فیصد کا نمایاں اضافہ ہوا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں