22

داؤدخیل:سیوریج کا گندہ جو جوہڑوں کا منظر پیش کر رہا ہے

داؤدخیل (نامہ نگار)ہماری گلیوں میں سیوریج کا گندہ جو جوہڑوں کا منظر پیش کر رہا ہے اب عوام کے لیے وبال جان بن گیا ہے گلی میں سے گزرنا بھی محال ہے جبکہ ایم سی کی جانب سے مکمل خاموشی کئی بار اعلی حکام اور چیرمین کو آگاہ کیا لیکن کسی کے کان پر جوں تک نہیں رینگی محلہ سالار اور محلہ داؤخیل کے مکینوں کا سروے میں اظہار خیال کے دوران کہا یاسر ہاشمی ،گل شیر نے کہا کہ ہماری گلی میں سیوریج کی لائینیں بند پڑی ہیں جس کا گندہ پانی گلیوں میں مٹر گشت کر رہا ہے جب کہ پانی کے کھڑا ہونے سے جہاں بدبو پید اہو رہی ہے وہی ڈینگی مچھر کی افزائش بھی ہو رہی ہے جس سے بیماریاں پھیلنے کا بھی خدشہ ہے حبیب اللہ ،حاجی اطہر نے کہا کہ اس سیوریج کے گندے پانی کی وجہ سے نمازیوں کو مسجد میں جانے میں دشواری کا سامنا ہے اور کئی بوڑھے تو گندے پانی میں کئی بار گر چکے ہیں اور کپڑے بھی خراب ہو جاتے ہیں لیکن کوئی بھی اس سیوریج کی لائینوں کو کھولنے کے لیے نہیں آتا ہے ایک لاکھ آبادی کا شہر ہے اور صرف پانچ سینٹری روکر ہیں جو کہ ناکافی ہیں جس کی وجہ سے شہر کے کئی محلوں میں سیوریج کا پانی عذاب بنا ہوا ہے علی ملک ،نیازخان ،رحمت اللہ خان ،اور رشید نے کہا کہ محلہ سالار ،اور داؤخیل کی گلیوں میں سیوریج کا پانی جوہڑوں کا منظر پیش کر رہا ہے اس سے قبل بھی محلہ سالار میں سیوریج کے گٹر میں بچہ گر کر جاں بحق ہو چکا ہے پورے شہر میں سیوریج کا نظام درہم برہم ہو چکا ہے اور عوام شدید عذاب میں مبتلا ہیں ہم نے کئی بار سی او ایم سی ،چیرمین ایم سی ،اور دیگر عملہ کو کہہ کہہ کر تھک چکے ہیں لیکن ہماری کوئی شنوائی نہیں ہے کئی گلیوں میں سیوریج کے گندے پانی کی وجہ سے کئی گھر وں کے لوگ محصور ہو کر رہ گئے ہیں لیکن اس کے باوجود بھی ہم لوگ شدید مشکلات میں ہیں انہوں ڈی سی میانوالی اور چیرمین سردار خان سے مطالبہ کیا ہے کہ فوری طور ہماری گلیوں سے سیورج کی بند لائینیں کھول کر ہمیں اس عذاب سے نجات دلائیں ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں