5

جنوبی افریقہ میں بہت کچھ سیکھا پاکستانی ٹیم پہلے سے کافی بہتر ہوگئی,مکی آرتھر

سینچورین(اسپورٹس ڈیسک)جنوبی افریقہ کیخلاف تیسرا ٹی ٹوئنٹی جیتنے کے بعد قومی کرکٹ ٹیم کے ہیڈ کوچ مکی آرتھر کا کہنا ہے کہ گرین شرٹس نے جنوبی افریقہ میں بہت کچھ سیکھا اور اب پاکستانی ٹیم پہلے سے کافی بہتر ہو گئی،پروٹیز سرزمین پر فاسٹ بالنگ کیلئے سازگار وکٹوں پر آزمائش نے ورلڈ کپ کی تیاریوں میں پلیئرز کو ایک قدم آگے بڑھا دیا۔پاکستانی ٹیم کو جنوبی افریقہ کے دورے پر تینوں فارمیٹس کی سیریز میں ناکامی کا سامنا کرنا پڑا لیکن مکی آرتھر کو محسوس ہوتا ہے کہ ان کی ٹیم نے اس دورے پر بہت کچھ سیکھا جو جنوبی افریقہ سے مفید معلومات اور بھرپور اعتماد لے کر واپس جائے گی۔ان کا کہنا تھا کہ وہ ساڑھے چار تک لگاتار سفر میں رہے کیونکہ متحدہ عرب امارات میں آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ کیخلاف کھیلنے کے بعدگزشتہ برس ایک بہترین ٹیم کے طور پر جنوبی افریقہ پہنچے اور نتائج سے قطع نظر کھلاڑیوں نے اس دورے پر کافی کچھ سیکھا اور انہوں نے ورلڈ کپ کی تیاریوں کیلئے خود کو مسالے دار وکٹوں پر آزمائش میں ڈال کر بہتری کی راہ حاصل کرلی ہے ۔مکی آرتھر کا کہنا تھا کہ انہیں اس بات پر فخر ہے کہ جنوبی افریقی ڈرانے اور دھمکانے والے بالنگ اٹیک کیخلاف ان کے کھلاڑیوں نے اچھی کارکردگی بھی پیش کی اور پاکستانی ٹیم ورلڈ کپ کی تیاریوں کیلئے پہلے سے بہتر ہو گئی کیونکہ بیشتر کھلاڑیوں کو بیرون ملک مخالف حالات میں کھیل کر قیمتی معلومات کے ساتھ اعتماد بھی حاصل ہوا ہے جو مستقبل قریب میں ان کیلئے کارآمد ثابت ہوگا۔قومی ہیڈ کوچ کا کہنا تھا کہ وہ پورے دورے میں اپنے پلیئرز کی نشونما کو دیکھتے رہے کیونکہ دورے کیلئے جنوبی افریقہ ایک مشکل ملک ہے جہاں کوئی ایشیائی ٹیم جیت نہیں پاتی اور پاکستانی کھلاڑیوں کو مقابلہ کرتے ہوئے دیکھنا خوشی کا باعث بنا جنہوں نے ایک مرتبہ بھی یہ تاثر نہیں دیا کہ وہ اب واپس جانے کی جلدی میں مبتلا ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ دورے میں آخری ٹریننگ سیشن بھی اتنا ہی محنت سے بھرپور تھا جتنا کہ پہلا پریکٹس سیشن جب پاکستانی ٹیم نے جنوبی افریقہ میں قدم رکھا تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں