15

گریڈ تھل کینال منصوبہ فنڈز کی عدم دستیابی کی وجہ سے ناکام

نور پور تھل:نہریں صفائی نہ ہونے کی وجہ سے جنگل کا منظر پیش کر رہی ہیں ، ملازمین گھر بیٹھے تنخواہیں وصول کر رہے ہیں مشرف کا منصوبہ لیگی حکومت نہ منجمد کر دیا تھا ،وزیر اعظم عمران خان منصوبے کی فوری تکمیل کرائیں :کسان
چار اضلاع کے ریگستانوں کو سرسبز و شاداب بنانے کیلئے شروع کیا گیا گریٹر تھل کینال منصوبہ فنڈز کی عدم دستیابی کی وجہ سے اپنی افادیت کھو چکا ہے نہریں صفائی نہ ہونے کی وجہ سے جنگل کا منظر پیش کر رہی ہیں جبکہ اس منصوبے کی مد میں قوم کے اربوں روپے مٹی کی نظر ہو چکے ہیں اگست 2001میں سابق صدر جنرل پرویز مشرف کی جانب سے ضلع خوشاب، بھکر، جھنگ اور مظفر گڑھ کے ریگستانوں کو سر سبز و شاداب بنانے کیلئے گریٹر تھل کینال کا منصوبہ شروع کیا گیا جس کا باقاعدہ افتتاح سابق صدر نے آدھی کوٹ کے مقام پر کیا اس منصوبے کو 3فیزمنکیرہ کینال، دھنگانہ کینال،اور نور پور تھل کینال میں تقسیم کیا گیا اور فیز ون پر کام شروع کر دیا گیا فیز ون میں علاقہ تھل کے ریگستانوں کو پانی کی فراہمی کیلئے کئی ایک ڈسٹریاں بھی بنائی گئیں 2001میں شروع ہونے والا منصوبہ جس کا کل تخمینہ 30ارب روپے رکھا گیا8ارب روپے کی لاگت سے منکیرہ کینال کو مکمل کر کے محکمہ انہار کے حوالے کر دیا گیا اس سارے منصوبے کی تکمیل 2008میں مکمل ہونا تھی لیکن حکومت تبدیل ہوتے ہی اس منصوبے کے فنڈز کو منجمد کر دیا گیا جس سے علاقہ تھل کالاکھوں ایکڑوسیع و عریض رقبہ سیراب ہونے سے محروم رہ گیا جبکہ مکمل ہونے والے فیز ون کی آج تک بھل صفائی نہ ہو سکی منصوبے کی دیکھ بھال کیلئے بھرتی کئے گئے سینکڑوں ملازمین گھروں میں بیٹھ کر تنخواہیں وصول کر رہے ہیں تھل کے کسانوں نے وزیر اعظم پاکستان عمران خان سے اس منصوبے کی فی الفور تکمیل اور صفائی کروانے کی اپیل کی ہے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں