Home پاکستان علاج کی بھیک مانگی نہ مانگوں گا :نوازشریف

علاج کی بھیک مانگی نہ مانگوں گا :نوازشریف

ماں جی دعا فرمائیں، جو اللہ کو منظور ہوا، ہوجائے گا:والدہ کو جواب سابق وزیر اعظم کا ہسپتال جانے سے پھر انکار ، بازو میں درد تشویشناک علامت :شہباز
لاہور (سیاسی رپورٹر،دنیا نیوز،خبر ایجنسیاں)والدہ اور شریف فیملی کی کوشش ایک بار پھر ناکام ہو گئی، سابق وزیراعظم نواز شریف نے علاج کی غرض سے ہسپتال جانے سے صاف انکار کر دیا ، ملاقاتوں کیلئے مختص دن کے باوجود بھی آج کوئی نواز شریف سے ملاقات نہیں کرسکے گا، میاں نواز شریف نے کہا حکومت کا تضحیک آمیزرویہ قبول نہیں، ایک سے دوسرے ہسپتال گھمایا جارہا، میڈیکل بورڈز کی رپورٹس کے بعد بھی علاج شروع نہیں ہوا، عزت کی موت کو ترجیح دوں گا، علاج کی بھیک مانگی ہے اور نہ مانگوں گا،علاج کے نام پر سیاست ہورہی ہے ، ہمیشہ اصولوں کی سیاست کی اب بھی اپنے اصولوں پر قائم رہوں گا۔انہوں نے والدہ سے کہا ماں جی دعا فرمائیں، جو اللہ کو منظور ہوا، ہوجائیگا، شہبازشریف نے کہا ان کو بازو میں درد کی بار بار شکایت سامنے آرہی ہے جو تشویشناک علامت ہے ، نوازشریف کی صحت کی وجہ سے ملاقات نہیں ہو سکتی ،کارکنان اپنے اپنے علاقوں میں خصوصی دعاؤں کا اہتمام کریں۔مریم نواز نے ایک ٹوئٹ کیا دل کی تکلیف اور طبیعت کی خرابی کے باوجود میاں نواز شریف ہسپتال جانے پر راضی نہیں ۔ تفصیل کے مطابق نواز شریف کی صحت کو دیکھتے ہوئے شریف فیملی نے ان کو ہسپتال جانے کیلئے منانے کیلئے کوٹ لکھپت جیل میں ملاقات کی، جوتقریباً ڈیڑھ گھنٹے تک جاری رہی جس میں مسلم لیگ (ن) کے صدر شہبازشریف، مریم نواز، حمزہ شہباز اور والدہ بیگم شمیم شامل تھیں۔ شہبازشریف نے نوازشریف کی صحت دریافت کی اور ہسپتال منتقلی کے معاملے پر بات کی۔ شریف فیملی نواز شریف کو مناتی رہی کہ آپ جہاں سے کہیں گے وہیں سے علاج کرایا جائے گا لیکن نواز شریف نے ہسپتال جانے سے انکار کردیا اور کہا حکومت نے اب تک علاج کی کوئی سہولت فراہم نہیں کی، صرف تنگ کیاجارہا ہے ، نواز شریف نے والدہ کا ہاتھ چومااور گھر جانے کی التجا کی ۔صباح نیوز کے مطابق مریم نواز نے ٹوئٹ پیغام میں کہا نواز شریف کی جان کو خطرہ ہے ،انہیں خدانخواستہ کچھ ہوا تو کون ذمہ دار ہو گا؟ شہبازشریف نے ایک بیان میں کہا نوازشریف کا علاج نہ کرنا جرم ہے ، ایک بیمار شخص کو سیاسی انتقام کا نشانہ بنانا کم ظرفی ہے ، ای سی ایل میں نام ہونے کے باوجود وزرا بیرون ملک جاتے ہیں، لیکن ملک کو جوہری طاقت بنانے والے کو علاج کے لیے باہر جانے کی اجازت نہیں۔شہباز شریف نے کہا کہ نواز شریف پاکستان کا فخر ہیں ، پنجاب حکومت کے اپنے بنائے ہوئے میڈیکل بورڈز کی رائے نہ ماننا حکومت کی بدنیتی اور اخلاقی پستی کو ظاہر کرتا ہے ۔شہباز شریف نے مطالبہ کیا نوازشریف کو بلاتاخیر عارضہ قلب کی تمام سہولیات والے ہسپتال منتقل کیاجائے ، اس کام میں پہلے ہی تاخیر ہوچکی ہے ، مزید کسی تاخیر، غفلت اور مجرمانہ لاپرواہی کے ذمہ دار عمران خان اور ان کی حکومت ہوگی۔ایم ایس ڈاکٹر امیر حسین نے کہا ڈاکٹرز کی ہدایت کے مطابق ان کا طبی معائنہ اورٹیسٹ کیے جائیں گے ، تمام تیاریاں مکمل کر لی گئی ہیں،ہسپتال میں ڈاکٹرز اور عملہ موجود ہے ۔ادھر جیل حکام کا کہنا ہے نواز شریف کی ہسپتال منتقلی کا علم نہیں،کسی قسم کے احکامات موصول نہیں ہوئے ۔ لیگی رہنما احسن اقبال نے کہا نواز شریف مسلسل انجائنا کی تکلیف میں مبتلا ہیں، حکومت کی جانب سے ان کے علاج کے سلسلے میں سنجیدگی نہیں دکھائی جا رہی ۔ حمزہ شہبازنے تایا سے ملاقات کے بعد کہا نوازشریف کی صحت سے متعلق علامات اچھی نہیں، حکومت خدانخواستہ حادثے کا انتظار کرنے کے بجائے قانون کے تحت فوری اپنا فرض پورا کرے ۔ حکومت فراست کی راہ اپنائے اور علاج معالجے کو سیاسی تماشا اور انا کا مسئلہ نہ بنائے ۔ ورنہ ہمیں بھی راست اقدام اٹھانا پڑے گا۔

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Check Also

محکمہ انہار کے افسر پانی چوری میں ملوث, فصلیں سیراب کرنیکا ریٹ مقرر, بیلداروں کے زریعہ وصولی

سرگودھا(سٹاف رپورٹر ) وزارت داخلہ پنجاب کے خصوصی ٹاسک پر حساس ادارے کی جانب سے حالیہ خفیہ …