مسلم ممالک پر پابندی، امریکی جامعات ٹرمپ کے فیصلے کی مخالف

واشنگٹن : امریکی صدر کے مسلم ممالک پر پابندی کے حکم نامے کیخلاف امریکا کی 17جامعات نے ٹرمپ کے فیصلے کو عدالت میں چیلنج کردیا ہےامریکی صدر کے مسلم ممالک پر پابندی کے حکم نامے کیخلاف امریکا کی 17جامعات نے ٹرمپ کے فیصلے کو عدالت میں چیلنج کردیا ہے ، جامعات کا کہنا ہے کہ پابندیوں سے مشن کو شدید دھچکا پہنچے گا،نہ صرف علمی بلکہ تحقیقی کام بھی متاثر ہوں گے ۔

فیس بک سے دہشت گردوں کی شناخت ممکن ہو سکے گی

نیویارک(این این آئی)فیس بک کے بانی مارک زکر برگ نے ایک نیا منصوبہ تیار کیا ہے جس کے تحت مصنوعی ذہانت والے سافٹ ویئر زکی مدد سے سائٹ پر پوسٹ کیے جانے والے شدت پسندانہ مواد کا جائزہ لیا جا سکے گا۔میڈیا رپورٹس کے مطابق انہوں نے اپنے ایک خط میں اس منصوبے کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ بالآخر مصنوعی ذہانت والا سافٹ ویئر ایلگوردمز دہشت گردی، تشدد، غنڈہ گردی جیسے مواد کی نشاندہی کر سکے گا اور اس سے خودکشیاں روکنے میں بھی مدد ملے گی۔تاہم انکا کہنا تھا اس قسم کے سافٹ ویئر کو مکمل طور پر تیار کرنے میں برسوں لگ سکتے ہیں۔اس سے متعلق انہوں نے تقریباً 5500 الفاظ پر مشتمل ایک خط میں تفصیلات کا ذکر کیا ہے ۔ انہوں نے کہا فیس بک پر ہر روز اربوں کی تعداد میں مختلف طرح کے پیغامات اورتبصرے پوسٹ ہوتے ہیں اور ان کا جائزہ لینا تقریباً ناممکن ہے ۔ان کے مطابق اس بارے میں جن پیچیدگیوں کا ہم نے سامنا کیا ہے اس سے کمیونٹی کی نگرانی کرنے کا ہمارا موجودہ طریقہ کار پیچھے رہ گیا ہے ۔مارک زکر برگ نے لکھا کہ ہم ایک ایسے نظام پر تحقیق کر رہے ہیں جو یہ سمجھنے کے لیے پوسٹ کی تحریر پڑھ سکے ، فوٹو اور ویڈیوز کو دیکھ سکے کہ کہیں کچھ خطرناک تو نہیں ہو رہا ۔انہوں نے مزید کہاکہ یہ ابھی بالکل اپنے ابتدائی مرحلے میں ہی ہے لیکن ہم نے اس سے بعض منصوبوں پر کام لینا شروع کردیا ہے اور یہ پہلے ہی سے مواد کی نگرانی کرنے والی ٹیم کے لیے رپورٹ تیار کرنے میں معاون ثابت ہو رہا ہے ۔

امریکا دو ریاستی حل کی حمایت کرتا ہے ، نکی ہیلی

نیو یارک :اقوام متحدہ میں امریکا کی سفیر نکی ہیلی نے کہا ہے کہ امریکا دو ریاستی حل کی حمایت کرتا ہے ، ان باتوں میں سچائی نہیں کہ ٹرمپ انتظامیہ دو ریاستی حل کی حمایت نہیں کرتی ہے ، حتمی فیصلہ اسرائیل اور فلسطین کو کرنا ہے ، ہم صرف اس عمل کی حمایت کرسکتے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق اسرائیل فلسطین کے دیرینہ تنازع پر سلامتی کونسل کے اجلاس میں پہلی بار شرکت کرنے کے بعد نکی ہیلی نے میڈیا کو بتایا کہ امریکا اسرائیل فلسطین تنازع کے دو ریاستی حل کی حمایت کرتا ہے ۔ کوئی بھی جو یہ کہنا چاہتا ہے کہ امریکا دو ریاستی حل کی حمایت نہیں کرتا، یہ ایک غلطی ہے ۔ نکی ہیلی نے یہ بات کئی بار دہرائی کہ ہم مکمل طور پر دو ریاستی حل کی حمایت کرتے ہیں ، تاہم ہم اس کو ایک نئے زاویے سے بھی دیکھ رہے ہیں جس سے ان دو فریقوں کو مذاکرات کی میز پر لایا جا سکے ، جو کچھ ہم کریں ہمیں انہیں اس پر رضامند کرنا ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ بالآخر کوئی بھی حتمی حل اسرائیل اور فلسطینی اتھارٹی کی طرف سے آنا ہو گا اور امریکا صرف اس عمل کی حمایت کر سکتا ہے ۔ مشرق وسطیٰ کے امن عمل کے لیے اقوام متحدہ کے خصوصی رابطہ کار نکولے ملاڈینوو نے کہا کہ دونوں عوام کی جائز قومی امنگوں کے حصول کے لیے دو ریاستی حل ہی واحد راستہ ہے ۔

بریگزٹ کیخلاف اٹھ کھڑے ہونیکاوقت آ گیا، ٹونی بلیئر

لندن (دنیا ڈیسک) ٹونی بلیئر نے برطانوی عوام کو یورپی یونین سے علیحدگی کے معاملے پر ذہن تبدیل کرنے کیلئے مائل کرنے کو اپنا مشن قرار دیا ہے ۔ سابق وزیرِ اعظم نے تقریر کرتے ہوئے کہا کہ لوگوں نے ریفرنڈم میں بریگزٹ کی شرائط کے بارے میں معلومات کے بغیر ووٹ دیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ وہ کھائی میں گرنے سے بچنے کا راستہ ڈھونڈنے کیلئے حمایت اکٹھی کر رہے ہیں، تاہم سابق وزیر ڈنکن سمتھ نے کہا کہ بلیئر کا بیان متکبرانہ اور غیر جمہوری ہے ۔

بھارت نے مسعود اظہر کے خلاف ٹھوس ثبوت نہیں دیئے:چین

بیجنگ(آئی این پی )چین نے بھارت پر واضح کیا ہے کہ کالعدم جیش محمد کے سربراہ مولانا مسعود اظہر کو اقوام متحدہ میں دہشت گرد قرار دلوانے کے لیے ٹھوس شواہد فراہم کئے جائیں۔چائنہ ریڈیو انٹرنیشنل کے مطابق چینی وزارت خارجہ کے ترجمان نے پیغام دیا ہے کہ اگر بھارت اگرچاہتا ہے کہ چین اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں مولانا مسعود اظہر کو دہشت گرد قرار دینے کی بھارتی قرارداد کو قبول کرے تو اس کے لیے بھارت کو ٹھوس شواہد فراہم کرنا ہوں گے ۔ ترجمان نے کہا چین مقصدیت، غیر جانبداری اور پیشہ وارانہ اصولوں کی پالیسی اپنائے ہوئے ہے اور اس پر قائم بھی ہے کیونکہ چین کا معیار اور طریقہ کار صرف یہی ہے ۔ انہوں نے کہاکہ ٹھوس ثبوت نہ ملنے پر قرارداد پر اتفاق رائے کرنا مشکل ہو گا۔ چین

About

View all posts by

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *