بزنس

پاکستان کو قرض پروگرام دوبارہ شروع کرنا پڑیگا آئی ایم ایف

اسلام آباد (رپورٹ:ساجد چوہدری) انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ(آئی ایم ایف) نے پاکستان میں عام انتخابات 2018کے بعد بر سر اقتدار آنے والی نئی پاکستانی حکومت کیلئے نئے قرض پروگرام کی ضرورت کی نشاندہی کر دی ہے ، موجودہ حکومت نے اپنی بقیہ مدت اقتدار میں آئی ایم ایف سے کوئی نیا قرض نہ لینے کا فیصلہ کیا ہے تاہم اگلے عام انتخابات کے نتیجے میں بننے والی حکومت کیلئے نیا پروگرام لینا مجبوری بن جائے گا ،نو منتخب امریکی ڈونلڈ ٹرمپ کی امریکی صدر کی حیثیت سے حلف لینے کی تقریب میں شرکت کیلئے پاکستان سے امریکی جانے والے چیف پاکستانی عمائدین نے وہاں آئی ایم ایف کے ڈائریکٹر مڈل ایسٹرن ریجن ہیرالڈ فنگر سے ملاقات کی اور ان سے پاکستانی معیشت کے بارے میں تفصیلی بات چیت کی، ہیرالڈ فنگر سے ملاقات کرنے والی ایک اعلیٰ پاکستانی شخصیت نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر روزنامہ دنیا کو بتایا کہ ہیرالڈ فنگر نے انہیں بتایا ہے کہ اگرچہ پاکستان کی موجودہ حکومت نے ایک مشکل قرض پروگرام جس میں کچھ کڑی شرائط خود موجودہ حکومت نے پیش کر کے ان پر عمل درآمد کرایا جس کے نتیجے میں ملکی معیشت ایک بڑے معاشی بحران سے باہر نکل آئی ہے اور اب پاکستانی معیشت پائیدار معاشی ترقی کے سفر کیلئے تیار ہوچکی ہے ، تاہم ان کا کہنا تھا اس قرض پروگرام میں سے کم و بیش پچیس فیصد اہم شرا ئط جو موجودہ حکومت پوری نہ کر سکی اور ان کی جگہ متبادل اقدامات کرائے وہ بہت اہم تھیں اور اب جبکہ 31دسمبر2016کو پاکستان آئی ایم ایف قرض پروگرام مکمل کر کے پروگرام سے باہر آ گیا ہے اور اب فنڈ کو ایسی اطلاعات مل رہی ہیں کہ پاکستان نے اس قرض پروگرام کے تحت کچھ اہم اقدامات کو جاری رکھنے کا وعدہ کیا تھا تاہم اب ان اقدامات پر عمل درآمد کے بجائے مستقبل کی یہ کمٹمنٹ رول بیک کر دی گئی ہیں اور کچھ ایسے اقدامات کی بھی اطلاعات سامنے آ رہی ہیں جو ماضی میں کیے گئے اہم اصلاحات کے پروگرام کے اقدامات کے بالکل منافی ہیں ۔ہیرالڈ فنگر نے نشاندہی کی کہ کیونکہ پاکستان پر اندرونی و بیرونی قرض کا بوجھ جی ڈی پی کے مقررہ ہدف سے کہیں اوپر ہے اور عالمی کساد بازاری کے سبب ملکی برآمدات کم ہیں، ترسیلات زر کی صورتحال اسقدر حوصلہ افزا نہیں ہے ، ایسی صورت میں موجودہ زرمبادلہ کے ذخا ئر مزید بڑھنے کے بجائے ان پر دباؤ بڑھ جائے گا اور ادائیگیوں کے توازن کے بگڑنے کی صورت میں سال2018کے عام انتخابات کے بعد بر سر اقتدار آنے والی نئی حکومت کیلئے آئی ایم ایف سے نیا قرض پروگرام لینا ضروری ہوجائے گا جس کیلئے نئی حکومت کو اپنی ملکی ضروریات اور ممکنات کو مد نظر رکھ کر (ہون گرون) معاشی اصلاحات کا پیکیج بناکر فنڈ کے ساتھ اس پر مذاکرات کرنا ہوں گے اور ان مذاکرات کی کامیابی کی صورت میں نئی حکومت کو کم و بیش حال ہی میں ختم ہونیوالے قرض پروگرام کے برابر نیا قرض پروگرام لینا پڑے گا۔

سونا100روپے سستا،فی تولہ45600کاہوگیا

کراچی(بزنس رپورٹر)دس گرام سونا43ہزار371روپے ،فی اونس1229ڈالر کی سطح پر رہاعالمی بلین مارکیٹ میں گزشتہ روز سونے کے نرخ میں7ڈالر کی کمی دیکھی گئی اور فی اونس سونے کی قیمت 1229ڈالرہوگئی۔ بین الاقوامی مارکیٹ میں سونے کے نرخوں میں کمی کے باعث مقامی سطح پر بھی سونے کی قیمتوں میں کمی دیکھی گئی۔ آل پاکستان سپریم کونسل جیولرز ایسوسی ایشن کی رپورٹ کے مطابق منگل کو ملکی صرافہ مارکیٹوں میں سونے کی فی تولہ قیمت میں 100روپے کی کمی دیکھی گئی جس کے بعد کراچی ،حیدرآباد،لاہور،ملتان،فیصل آباد، راولپنڈی ،اسلام آباد اور کوئٹہ کی صرافہ مارکیٹوں میں سونے کی فی تولہ قیمت50ہزار600روپے ہوگئی ،اسی طرح 85روپے کی کمی سے دس گرام سونے کی قیمت43 ہزار371روپے ریکارڈ کی گئی جبکہ چاندی کی فی تولہ قیمت770روپے کی سطح پر برقرار رہی ۔

ڈالر کی قدر بڑھ گئی

کراچی(بزنس رپورٹر)انٹربینک اوراوپن کرنسی مارکیٹ میں ڈالر کے مقابلے میں پاکستانی روپیہ گراوٹ کا شکار ہو گیا ۔فاریکس رپورٹ کے مطابق انٹربینک میں ڈالرکی قدر3پیسے بڑھ گئی جس سے ڈالرکی قیمت فروخت 104.85 روپے پرجاپہنچی، اسی طرح10پیسے کے اضافے سے اوپن مارکیٹ میں ڈالرکی قیمت فروخت 107.30 روپے ہوگئی ۔رپورٹ کے مطابق یوروکی قدرمیں65پیسے اور برطانوی پاؤنڈ میں 30پیسے کی کمی ریکارڈ کی گئی۔

چینی موبائل کمپنی ”شاؤ می“ نے پاکستان میں جدید ٹیکنالوجی سے آراستہ موبائل فون سیٹ کی سیریز متعاف کرا دی


اسلام آباد (اے پی پی) چین کی موبائل ساز کمپنی ”شاؤ می“ نے پاکستان میں معیاری اور سستے جدید ٹیکنالوجی سے آراستہ 12 سے 24 ہزار مالیت کے موبائل فون سیٹ کی سیریز متعاف کرا دی ہے۔ پاکستان کے صارفین فون دراز ڈاٹ پی کے اور زونگ موبائل کے ذریعے خرید سکیں گے۔شاؤ می فون کے ساؤتھ ایشیاءکنٹری ڈائریکٹر جیک نے کہا کہ انہیں خوشی ہے کہ یہ کمپنی پاکستان میں جدید ٹیکنالوجی سے آراستہ موبائل فون متعارف کرا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ریڈمی فور اے اور مائی میکس فون دنیا میں اچھی شہریت کے حامل ہیں جس سے پاکستان کے صارفین بھی مستفید ہو سکیں گے اور ان فونز کی تمام اسسریز بھی ان کے ساتھ فراہم ہوں گی۔ انہوں نے کہا کہ ریڈمی فور اے ایک میگا کوآڈکور پراسیسر کا حامل 3120 ایم اے ایچ بیٹر ٹائمنگ رکھنے والا فون ہے۔ انہوں نے کہا کہ می میکس فون کی بیٹری ٹائمنگ 4850 ایم اے ایچ ہے۔ یہ فون 8 گھنٹے ویڈیو پلے بیک خاصیت کے ساتھ 128 جی بی ایس ڈی سٹوریج کی اہلیت رکھتا ہے، 16 میگا پکسل کیمرے کے ساتھ فنگر پرنٹ سکیورٹی لاک کی خاصیت بھی اس فون میں موجود ہے۔ کمپنی کو پاکستان میں بزنس پلان دینے والی کمپنی سمارٹ لنکس کے ایگزیکٹو فنانس ڈائریکٹر عبدالستار نے کہا کہ شاؤمی نے پاکستان کی بہترین اقتصادی ترقی اور کاروبار دوست حالات کے پیش نظر اپنا کاروبار پاکستان میں شروع کرنے پر رضامندی کا اظہار کیا۔ شاؤمی نے پاکستان کی حکومت کی پالیسیوں پر اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے اپنے کاروبار کو وسعت دی ہے۔ پاکستان اور شاؤمی ایک دوسرے کیلئے ایک قابل اعتماد پارٹنر ثابت ہوں گے۔ سی پیک کے ذریعے چین اور پاکستان ایک مضبوط دوست ملکوں کے ساتھ خطہ کے مستحکم معیشت کے حامل ممالک کے طور پر بھی دنیا میں مقام حاصل کر رہے ہیں۔ اس موقع پر زونگ موبائل کے معید جاوید اور دراز ڈاٹ پی کی کے سی ای او جیک نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آن لائن موبائل فون کیلئے دراز پی کے اپنی خدمات فراہم کرے گی جبکہ زونگ کی فرنچائز پر بھی یہ فون دستیاب ہوں گے۔

کاروبار کی خبریں

روئی کے نرخ مستحکم ، کاروباری حجم کم ، 7لاکھ گانٹھوں کا اسٹاک رہ گیا

کراچی(بزنس رپورٹر)مقامی کاٹن مارکیٹ میں گزشتہ ہفتے کے دوران ٹیکسٹائل و اسپننگ ملز کی جانب سے روئی کی محتاط خریداری اور جنرز کی طرف سے بھی محدود فروخت کے باعث روئی کے بھاؤمیں مجموعی طور پر استحکام رہا،کاروباری حجم بھی نسبتاً کم رہا۔ کراچی کاٹن ایسوسی ایشن کی اسپاٹ ریٹ کمیٹی نے ا سپاٹ ریٹ میں فی من 50 روپے کی کمی کرکے اسپاٹ ریٹ فی من 6650 روپے کے بھاؤپر بند کیا۔کراچی کاٹن بروکرز فورم کے چیئرمین نسیم عثمان نے بتایا کہ فی الحال جنرز کے پاس روئی کی تقریباً 7لاکھ گانٹھوں کا اسٹاک رہ گیا ہے جبکہ نئی فصل آنے میں ہنوز 5 تا 6 مہینے کا طویل عرصہ ہے جس کے باعث روئی کے بھائو میں مندی ہونے کی توقع کم ہے علاوہ ازیں کپاس پیدا کرنے والے ممالک بھارت اور چین، وغیرہ میں بھی روئی کا بھاؤ مستحکم ہے ،بھارت میں روئی کے بھاؤمیں اضافہ ہورہا ہے ۔بھارت کی ٹیکسٹائل ملز نے بیرون ممالک سے اس سال کپاس کی 8 لاکھ گانٹھیں درآمد کی ہیں جو گزشتہ سال کے نسبت 20 فیصد زیادہ ہے ۔چین امریکا سے وافر مقدار میں روئی کی درآمد کررہا ہے ان سارے عوامل کو نظر میں رکھتے ہوئے کہا جاسکتا ہے کہ آئندہ دنوں میں روئی کے بھاؤمستحکم رہیں گے ،مقامی ٹیکسٹائل و اسپننگ ملز نے جنرز سے فی الحال روئی کی تقریباً98لاکھ گانٹھیں خریدی ہیں جبکہ بیرون ممالک جس میں بھارت، امریکا، افریقہ، برازیل اور آسٹریلیا وغیرہ شامل ہیں سے فی الحال تقریباً روئی کی 24لاکھ گانٹھوں کے درآمدی معاہدے کر لیے ہیںجبکہ مقامی ٹیکسٹائل و اسپننگ ملز کی سالانہ کھپت تقریباً ایک کروڑ 42 تا 45 لاکھ گانٹھوں کی ہے لہذا بیرون ممالک سے مزید تقریبا 15ً لاکھ گانٹھیں درآمد کرنے کی ضرورت رہے گی۔

 

ایل پی جی کی قیمت 2 ہزار روپے فی سلنڈر تک پہنچنے کا خدشہ

لاہور : ایل پی جی کی قیمت 2 ہزار روپے فی سلنڈر تک پہنچنے کا خدشہ پیدا ہو گیا۔ ڈسٹری بیوٹر ایسوسی ایشن کا کہنا ہے کہ ایل پی جی کی درآمدات شروع نہ ہوئی تو بحران شدت اختیار کر سکتا ہے۔اوگرا کی جانب سے ایل پی جی سلنڈر کی قیمت 900 روپے طے کیے جانے باعث امپورٹرز نے اس کی درآمدات روک دی ہے۔ چیئرمین ایل پی جی ڈسٹری بیوٹر ایسوسی ایشن عرفان کھوکھر کا کہنا ہے کہ اگر اوگرا نے 900 روپے فی سلنڈر والے فیصلے پر نظرثانی نہیں کی تو یہ سلنڈر 2000 روپے سے بھی تجاوز کر سکتا ہے جس کا واحد ذمہ دار اوگرا ہو گا۔عرفان کھوکھر کا کہنا تھا کہ اوگرا عالمی منڈی کو یکسر نظرانداز کر کے صنعت کش فیصلہ نہیں کر سکتا۔ ایل پی جی کی صنعت ہو گی تو مارکیٹ میں ایل پی جی دستیاب ہو گی، اوگرا کے اس فیصلے کا خمیازہ عوام کو بھگتنا پڑے گا۔پاکستان اپنی توانائی کی ضروریات پوری کرنے کے لئے ہر ماہ تقریبا 50 ہزار ٹن ایل پی جی درآمد کرتا ہے۔ اگر مطلوبہ گیس درآمد نہ کی گئی تو ملک میں توانائی بحران پیدا ہو سکتا ہے۔

 

پاکستان اسٹاک : کاروباری ہفتے کا مندی پر اختتام , 18 ارب ڈوب گئے

کراچی(بزنس رپورٹر)پاکستان اسٹاک مارکیٹ کاروباری ہفتے کے آخری روزمندی کی زدمیں رہی اورکے ایس ای 100 انڈیکس 2 بالائی حد کھوتاہوا 49300 پوائنٹس سطح پربندہوا۔مندی کے سبب مارکیٹ سرمائے میں 18 ارب سے زائدروپے کی کمی واقع ہوئی جس سے سرمائے کاحجم 98 کھرب سے گھٹ کر 97 کھرب روپے پرآگیا۔جمعہ کو کاروبارکے اختتام پرکے ایس ای 100 انڈیکس میں 212.59 پوائنٹس کی کمی ریکارڈ کی گئی جس سے کے ایس ای 100 انڈیکس 49588.30 پوائنٹس سے کم ہو کر 49375.71 پوائنٹس پرآگیا،اسی طرح 161.82 پوائنٹس کی کمی سے کے ایس ای 30 انڈیکس 26695.57 پوائنٹس اورکے ایس ای آل شیئرز انڈیکس 64 پوائنٹس کمی سے 33548.84 پوائنٹس سے گھٹ کر 33484.56 پوائنٹس پربندہوا۔جمعہ کومارکیٹ کے سرمائے میں 18 ارب 85 کروڑ 3 لاکھ 39 ہزار 40 روپے کی کمی ریکارڈ کی گئی جس کے نتیجے میں سرمائے کامجموعی حجم 98 کھرب 16 ارب 93 کروڑ 23 لاکھ 24 ہزار 473 روپے سے کم ہوکر 97 کھرب 98 ارب 8 کروڑ 19 لاکھ 85 ہزار433 روپے رہ گیا۔جمعہ کومارکیٹ میں 37 کروڑ 33 لاکھ 3 ہزار حصص کے سودے ہوئے اور ٹریڈنگ ویلیو 20 ارب روپے ریکارڈکی گئی جبکہ جمعرات کو 26 کروڑ 32 لاکھ 60 ہزارحصص کے سودے ہوئے اورٹریڈنگ ویلیو 14 ارب روپے تک محدودرہی تھی۔پاکستان اسٹاک مارکیٹ میں جمعہ کو مجموعی طورپر 416 کمپنیوں کاکاروبارہواجس میں سے 225 کمپنیوں کے حصص کی قیمتوں میں اضافہ ، 178 میں کمی اور 13 کمپنیوں کے حصص کی قیمتوں میں استحکام رہا۔کاروبارکے لحاظ سے کے الیکٹرک لمیٹڈ 2 کروڑ 84 لاکھ ،پاورسیمنٹ لمیٹڈ 2 کروڑ 50 لاکھ ،دوست اسٹیل لمیٹڈ 2 کروڑ 42 لاکھ ،عائشہ اسٹیل مل 1 کروڑ 98 لاکھ اوربینک آف پنجاب ایک کروڑ 56 لاکھ حصص کے سودوں سے سرفہرست رہے ۔قیمتوں میں اتار چڑھاؤ کے اعتبار سے رفحان معیظ کے بھاؤمیں 379 روپے اورملت ٹریکٹرزکے بھاؤ میں 52.63 روپے کا اضافہ ہواجبکہ وائیتھ پاک لمیٹڈ کے بھاؤ میں 204.77 روپے اورسفائرٹیکسٹائل کے بھاؤ میں 67.80 روپے کی نمایاں کمی ریکارڈ کی گئی۔

 

عالمی مارکیٹ میں خام تیل کی قیمت 15 سال کی کم ترین سطح پرآگئی

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) عالمی مارکیٹ میں عرب لائٹ خام تیل کی قیمت میں 8 ڈالر کی کمی دیکھی گئی ہے جس کے بعد خام تیل کی قیمت 15 سال کی کم ترین سطح پر آگئی۔نجی ٹی وی چینل کے مطابق عالمی مارکیٹ میں عرب لائٹ خام تیل کی قیمت 8 ڈالر کمی کے بعد 38 ڈالر فی بیرل کی سطح پر آگئی اور 15 سال بعد خام تیل کی قیمت میں اتنی کمی دیکھی جارہی ہے۔دوسری جانب اگر عالمی منڈی کے تناسب سے دیکھا جائے تو یکم دسمبر سے ملک میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 3 سے 6 وپے تک فی لیٹر کمی کی جانی چاہیے تاہم حکومتی ذرائع کے مطابق عالمی مارکیٹ میں کمی کے باوجود حکومت نے یکم دسمبر سے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں برقرار رکھنے پرغورشروع کردیا۔